Dua Arafah in Urdu

Hits: 5

Dua Arafah in Urdu

Benefits of Reciting Dua Arafah:

The ninth day of Dhul-Hijjah is the Day of ‘Arafah, since it is on this day the pilgrims gather at the mountain plain of ‘Arafah, praying and supplicating to their Lord. In fact, one hadith says that ‘Hajj is Arafah’ (Abu Dawud). This means Arafah is the sum and substance of Hajj. Make your Qurbani donation here today!

The day of Arafah is also significant because this amazing ayah was revealed on this day:

“This day I have perfected for you your religion and completed My favour upon you and have approved for you Islam as religion.” (Surah al Maa’idah 5:3)

The prayer of Imam Hussain (as), the Chief of Martyrs, on the `Arafat Day is one of the famous prayers. Bishr and Bashr, the sons of Gh¡lib al-Asad, narrated that they, once, accompanied Imam Hussain (as) at the `Arafat Night when he left his tent with submission and reverence. He walked slowly until he, accompanied by a group of his household, sons, and servants, stopped at the left side of Mount Arafat and turned his face towards the Holy Ka`bah. He then raised his hands (for supplication) to the level of his face, just like a poor man begging food, and said the “Dua Arafah”

ذوالحجہ کی نویں تاریخ عرفہ کا دن ہے، کیونکہ اس دن حجاج کرام میدان عرفہ میں جمع ہوتے ہیں اور اپنے رب سے دعائیں مانگتے ہیں۔ درحقیقت ایک حدیث میں ہے کہ ’’حج عرفہ ہے‘‘ (ابو داؤد)۔ یعنی عرفہ حج کی جمع اور مادہ ہے۔ آج ہی یہاں قربانی کا عطیہ دیں!

عرفہ کا دن اس لیے بھی اہمیت کا حامل ہے کہ اس دن یہ آیت مبارکہ نازل ہوئی:

آج میں نے تمہارے لیے تمہارا دین مکمل کر دیا اور تم پر اپنی نعمت پوری کر دی اور تمہارے لیے اسلام کو بطور دین پسند کر لیا۔ (سورۃ المائدہ 5:3)

یوم عرفات کے موقع پر شہداء کے سردار امام حسین علیہ السلام کی دعا مشہور دعاؤں میں سے ایک ہے۔ غالب الاسد کے بیٹوں بشر اور بشر نے بیان کیا ہے کہ وہ ایک مرتبہ عرفات کی رات میں امام حسین (ع) کے ساتھ تھے جب آپ اپنے خیمے سے تعظیم و تکریم کے ساتھ نکلے تھے۔ وہ آہستہ آہستہ چلتا رہا یہاں تک کہ اپنے گھر والوں، بیٹوں اور نوکروں کے ایک گروہ کے ساتھ عرفات کے بائیں جانب رک گیا اور اپنا چہرہ خانہ کعبہ کی طرف موڑ لیا۔ اس کے بعد آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے اپنے ہاتھ (دعا کے لیے) اپنے چہرے کے برابر اٹھائے، جیسے کوئی غریب آدمی کھانا مانگتا ہے، اور دعا عرفہ کہی۔

You may also like...

error: Duasweb content is protected !!